سیہون دھماکا : انتظامیہ نے شہداءکے جسمانی اعضاءکچرے کے ڈھیر میں پھینک دیے ، علاقے میں تعفن

سیہون شریف(آن لائن ) لال شہباز قلندر کے مزار پر خودکش حملہ آور نے لوگوں کے ساتھ جو کیا سو کیا مگر اب یہ انکشاف ہوا ہے کہ انتظامیہ نےانسانیت کی تذلیل کرتے ہوئے دھماکے میں شہید  افراد کے جسمانی اعضاءکچرے میں پھینک دیے جنہیں اب دفن کر دیا گیا ہے ۔میڈیا رپورٹس کے مطابق ضلعی انتظامیہ نے 2روز قبل لال شہباز قلندر کے مزار پر خودکش حملے میں شہید ہونے والے 80افراد کے جسمانی اعضاءکو اٹھا کر دفن کرنے کی بجائے مزار کے احاطے کی صفائی کر دی اور ان اعضاءکو کچرے کے ڈھیر میں پھینک کر چلتے بنے جس کے بعد علاقے میں تعفن پھیلا اور آج جب لوگ کچرے کے ڈھیر پر جمع ہوئے تو ان کی آنکھیں یہ دیکھ کر کھلی کی کھلی رہ گئیں کہ وہاں انسانی اعضاءموجود تھے تاہم بعد میں انتظامیہ نے ان اعضا ءکو اٹھا کر ایک اجتماعی قبر میں دفن کر دیا ہے ۔کچرے میں پڑے انسانی اعضاءکو دیکھ کر لوگ غصے سے بے قابو ہو گئے اور انتظامیہ کو آگاہ کیا جنہوں نے بعد میں انہیں دفن کردیا ۔مزار کے سجادہ نشین سید مہدی شاہ نے اس حوالے سے اپنے بیان میں کہا ہے کہ خودکش حملے کے بعد مزار کی صفائی ہمارے سامنے کی گئی تھی اور ان اعضاءکو دفن کرنے کیلئے بھجوایا گیا تھا مگر انتظامیہ نے اگر ایسا کیا ہے تو انہیں سخت سزا ملنی چاہئیے۔

Facebook Comments