چک نمبر 182پی میں سرکاری سکول ٹیچر کا طالب علم پر تشدد۔ بازو توڑ دیا

صادق آباد ( رحیم یار خان نیوز)چک نمبر 182پی میں سرکاری سکول ٹیچر کا طالب علم پر تشدد۔ بازو توڑ دیا ۔طالب علم سفیان کے والدین انصاف کیلئے در بدر کی ٹھوکریں کھانے پر مجبور ۔سفیان کے والد اصغر علی کا احتجاج و انتظامیہ سے ایکشن لینے کا مطالبہ تفصیلات کے مطابق گز شتہ روز چک نمبر 182پی میں سرکاری سکول ٹیچر لیاقت علی نے پہلی کلاس کے طالب علم سفیان کو تفریح کے دور ان تشدد کا نشانہ بناتے ہوئے تھپڑو اور مکوں کی برسات کردی ۔ہاتھ پکڑ کر زور سے بازو توڑ دیا ۔غریب محنت کش اصغر علی حصول انصاف کیلئے در بد ر کی ٹھوکریں کھانے پر مجبور ہو گیا ہے اس موقع پر میڈ یا سے گفتگو کرتے ہوئے اصغر علی نے بتایاکہ میری بیوی جب سکول گئی تو سکول کے تمام سٹاف نے اُسے گالیاں دی اور دھکے دیکر سکول سے باہر نکال دیا اور کہاکہ بچے کا بازو دیوار سے گرنے کی و جہ سے ٹوٹا ہوا ہے ۔چک کے بااثر افراد سکول ٹیچر کوبچانے کیلئے مجھے مختلف ہیلے بہانوں سے تنگ کررہے ہیں اورمجھے قتل کرنے کی دھمکیاں دی جاتی ہیں کہ اگر تم نہیں ٹیچر لیاقت علی کے خلاف کوئی قانونی کاروائی کی تو تمہیں گاؤں سے نکال کر شہر بدر کردیں گے ۔سکول ٹیچر نے بچے کے علاج پر خرچ کی جانیوالی رقم کی واپسی کا بھی تقاضا کرنا شروع کردیا ہے ۔میرا چک میں رہنا تک دشوار کیا ہواہے میری اعلی حکام ڈی پی او رحیم یارخان ،ڈی ایس پی صادق آباد ،ایس ایچ او تھانہ منٹھار سے پرزور اپیل ہے کہ ملزم لیاقت علی کیخلاف قانونی کاروائی عمل میں لائی جائے ۔

Facebook Comments